Library Sindh Study FG Study Punjab Study

Author Topic: چین کمپنی نے آن لائن کاروبار کرنے والی کمپنی دراز کو خرید لیا  (Read 317 times)

AKBAR

  • Editorial board
  • Hero Member
  • *****
  • Posts: 3772
  • My Points +1/-1
  • Gender: Male
    • pak study

چین کمپنی نے آن لائن کاروبار کرنے والی کمپنی دراز کو خرید لیا


چین کی سب سے بڑی آن لائن کاروباری کمپنی علی بابا نے پاکستان سمیت متعدد جنوبی ایشیائی ممالک میں آن لائن کاروبار کرنے والی کمپنی ’دراز‘ (daraz.pk) کو خرید لیا۔
دراز گزشتہ 6 سال سے پاکستان، بنگلہ دیش، سری لنکا، نیپال اور میانمار میں آن لائن کاروبار کر رہی ہے، علی بابا کی جانب سے 8 مئی 2018 کو دراز کی خریداری تصدیق ہوئی۔

دراز ڈاٹ پی کے کی جانب سے جاری کیے گئے اعلامیے کے مطابق کمپنی اسی نام سے اپنے تمام آپریشنز علی بابا کی سربراہی میں جاری رکھے گی۔
بیان میں کہا گیا کہ علی بابا کی سرپرستی میں کام کرنے کے دوران دراز ڈاٹ پی کے آن لائن کاروبار، موبائل پیمنٹس اور ترسیلات کے کام کو جنوبی ایشیا کے پانچوں ممالک میں مزید توسیع دی جائے گی۔

بیان میں یہ بھی کہا گیا کہ دراز ڈاٹ پی کے جن پانچ ممالک میں اپنا آپریشن جاری رکھے ہوئے ہیں، وہاں کی مجموعی آبادی 34 کروڑ 60 لاکھ سے زائد ہے، جس میں سے 60 فیصد آبادی کی عمر محض 35 برس ہے۔
دراز کے شریک چیف ایگزیکٹو افیسرز (سی ای اوز) بجارکے مکلسن اور جوناتھن ڈور نے اپنے بیانات میں کہا کہ ان کی کمپنی علی بابا کے ساتھ مل کر خطے میں بہترین سروسز فراہم کرنے کے کام کو جاری رکھے گی۔

دوسری جانب علی بابا گروپ کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او) ڈینیئل زانگ نے اپنے بیان میں کہا کہ ان کی کمپنی ’دراز‘ کے ساتھ نئے کاروبار کا آغاز کرنے والے افراد کی حوصلہ افزائی سمیت صارفین کو بہترین سروس فراہم کرنے کے لیے اہم کردار ادا کرے گی۔
خیال رہے کہ دراز ڈاٹ نے پاکستان سمیت خطے کے دیگر ممالک بنگلہ دیش، سری لنکا، نیپال اور میانمار میں 2012 سے سروس کا آغاز کیا۔
دراز ڈاٹ پی کے پاکستان میں سب سے زیادہ معروف آن لائن کمپنی سمجھی جاتی ہے۔

علی بابا کا شمار نہ صرف چین بلکہ دنیا کی بہت بڑی آن لائن کمپنیوں میں ہوتا ہے، یہ کمپنی پاکستان میں بھاری سرمایہ کاری کرنے کا ارادہ بھی رکھتی ہے۔
علی بابا نے حکومت پاکستان کے ساتھ ملک میں سرمایہ کاری کرنے اور آن لائن کاروبار بڑھانے کے ایک معاہدے پر گزشتہ برس دستخط بھی کیے تھے۔
حوالہ: یہ خبرسب سے پہلے ڈان نیوز ڈاٹ ٹی وی کی ویب سائٹ پر مورخہ 3:50 PM 5/8/2018 کو شائع ہوئی