Library Sindh Study FG Study Punjab Study
PakStudy :Yours Study Matters

Urdu Language and Literature

Offline sb

  • **
  • 26696
  • +5/-0
  • Gender: Female
Urdu Language and Literature
« on: May 13, 2009, 09:25:12 PM »
Urdu Language and Literature
Preparatory:
lrzh have loose. angel, torn societies around the worship of gods, religious freedom and the unity and absoluteness hakmun always targeted the regime is brutal. rulers and priests, pro-caste people we cast them into line , as ignorant and bigoted and self-praise has luxuriate. tlsm Islam broke it, and the human padshahi, fuq albsry dyutayy, spam ritual worship, without discrimination and blind ignorance of the terrible human being won and saved from the chains of society subdue a man who laid the foundation of another, no masters and no person, not a barbaric attitude, not an ignorant hmyt. All human person and of the mutual equality, mercy, cooperation and community, the caliph of Allah on earth to fulfill his wishes.
The seat and boot, Skin, clothing, style of thinking to understand, likes and dislikes of the quality and effectiveness of the different Hindu language and literature is also mtrsh. Man created all things most dear language and literature as a conscious and semi-conscious literary effort of a person who is the shared capital and property. literature expressed through personality and mentality, not a mirror of the nation's culture and consistency conditions, its cultural artqay activities and scale of growth, right or wrong paths in the most effective strength and is growing all the traditions of the past in literature and notes are stored, which would move the nation's power and accountability of their actions and that, to the peaceful development of nations is due.
Urdu and local residents
Indo-Pak subcontinent and the Urdu language to get their national and I feel proud. That is why different areas of Punjab, Deccan, Sindh, NWFP and residents of UP Urdu nurturing and cherishing each other to grow up participated. subcontinent of India and Pakistan and all areas of the Urdu Mouldy or at least the initial stage of development, with Urdu being claimed and the reason for those unusual kruydgy nothing but the Urdu always understand their language because the other hundreds of languages ​​and culture and a language of their temperament does not represent such quality. grzykh both Hindu and Muslim communities grew in the Urdu and protect their culture.
Urdu Home
Mohammad Hussain Azad, his famous book Water of Life, claimed that Urdu is the native language, Bahasa left bridge. While some historians claim that Urdu is the Mouldy Deccan, Allama Syed Suleman Nadvi and the Hindu After the arrival of Arab Muslims, Urdu infrastructure in Sindh, Dr gryrsn) Grierson (Current evidence indicates that the Urdu and Hindi language anbalh mother from eastern tehsils ie populate the rural areas and to bid Ram Pur The park has proved that Urdu is the language the professor Shirani was born at the time when Muslims from Lahore to Delhi made it his capital had gone from being the language of Punjab, Punjabi and Urdu from the left is.
Men mentioned above, but they refuse to investigate claims of men who check two things should be kept in mind for sure.
First, the local languages ​​of Pakistan and India changing with the times and the traffic from the kukh languages ​​led to many changes, but the relationship is still intact. Especially the languages ​​of Punjab and the western two waterare branches of language, before the advent of Muslims in the region will last. lamrkzyt thanks to political instability and the language was split into several dialects. political instability due to the language could not save regularly share capital, from which linguistic history of the area can be set.
Review that the winners were not the ideal Muslim, even some Islamic features such as mutual brotherhood and equality persisted and was the result of the efforts to establish a government while still maintaining the uniqueness of their language. MuslimHe also owns a number of name is spoken and understood.
Persian-speaking Afghan, Turkish and Mongol fathanh entered in the subcontinent, they brought with Persian language. Mingled with local residents from being forced to adopt the language, Persian or break the relationship with the local bids s not as alternative as the Grand mayh, courteous and comprehensive Persian language slatyn last two centuries of Hindu-Muslim literary efforts, but also a cultural level, while the nation was already cast in religious language and distributed political divideI share the political unity and social past of the story that became a major languages. brhmnun and living in a society in sudrun languages ​​differed considerably. the dimension s last was more than fifteen thousand.
Muslims arrived here in the dispersed conditions was not possible for them to an extent that their cultural and religious language to withdraw from the Persian and Persian, living in India have adopted completely was impossible. So they what their elders had before. the Muslims of Iran Bid) Persian (Islamic traditions and values, cultural capital as a great power of the subcontinent as a condition of anonymity bid authorizing them to interfere in all the traditions of Arabic and Persian were received by the Urdu language was born today has become the world's third largest language.
The resolution of this problem is the fact that Urdu is which country? First winners of the Pakistan Muslim political base in Lahore and had died. He adapted the language of the Islamic requirements. Centuries after the center came from Lahore to Delhi and Delhi as headquarters of the Muslim culture found here. Muslim soldiers, scholars and Sufis to express their thoughts and feelings through language, which was built here in the local dialect, and it was not very different from dialects spoken in Punjab, Persian and the local language born of the union Urdu hereinafter called the bid.
Revolution and Language
Built into the common language of Urdu and Muslims faced many ebb and flow of new countries ylgarun tskyr remote areas and found the throne of Delhi has become the new language is transferred abroad fathun Mughals continued steady growth in the subcontinent amdar bilingual for the most revolutionary changes that led to. Mughals arrival before the conditions are so favorable were the artqay developing local language Urdu and Persian, by removing the language to acquire, because by that time) 1206 AD to 1526 AD (at least three centuries nsla foreign birth and training were the years of rule by local residents who were not attributed to their ancient homeland, their language was also the place to get official status for three centuries the time was called out of his latest dard artqay Mughal ruler of India alien language was not willing to accept this position. And so once again the dominant Persian and Persian force more local languages affected. in the courts of the Mughal rulers were not only a poet but of all the amazing, from India's rich and attractive value akyar pregnancy and newly arrived in large numbers were deposited in the wonderful language and literature ganDehlvi language also influenced the later language. arduyy maly, majestic title of Shah Jahan's era, there where King Faisal was named as capital of the Mughal court culture at the height of my glory That seemed to reach Delhi where the ruling Muslim language envy your first impression is very different and more pleasant, and polite language has become widely used. mhaurat and now most of the ancient words of the Trick or made obsolete or new patterns in Persian and Arabic words, synonyms, Dhal had some way had to be withdrawn. ... In short, language Dehlvi, the era of Shah Jahan, maly arduyy language, which was partially attributed to the same tribes mtmdn The Contemporary is a decent person, Urdu-language story is considered as artqay not so simple. language from the beginning to become a literary history of the dialects and languages ​​of varisized of political and social tlatmun You can say what the current position in the face.

However, the language of Muslims of all cultural and social revolutions of the bausf mirrors edge of trends and the effects of non-Muslims will not accept calls. The cause of Hindu-Muslim unity Urdu today is considered a monument.
Urdu Name
Grow in the subcontinent, Urdu language's current name, which was proposed early last century and earlier was in the entire subcontinent. Turkic language known as Lashkar-e-Urdu and other languages ​​in the army as soon as plurals became the hosts speak different dialects in accumulation of the common media language that was called Urdu.
Muslims in Indian subcontinent at the time of arrival of numerous small and independent states, was distributed. The lack of interaction in every civilization and culture were as different languages. But only one of the subcontinent
Each region using the interactive feel for the dialect of Persian and Arabic words and will be used automatically, as Islamic culture, Persian and Arabic culture needs could be fulfilled by the local dialects and Islamic influences begin to accept . and stages of evolution of Urdu language started as grand.
They have different names. Mughal Emperor Akbar's famous minister, Abolfazl Dehlvi and Lahori language and are considered separate languages.
Aulyayy scholars and Urdu
Muslim rulers in the spread of Urdu language, those who work more than they were scholars who aulyayy the daily dialect taught in the religion and character of every known publication in the local elderly people and their easy conversation dlnsynOh rbulny created the taste. History of Urdu sary and nsry oldest sample of elderly people are found in words, the spoken phrase and harmony that exists in the exon. Baba-e-Urdu Maulvi Abdul Haq in his short book The initial development of Urdu scholars. sufyayy share, in the words of their elders have, which is expected to read how these men preach religion in the subcontinent and improving the quality dimension as well as a common language in the play grew.
By the sixteenth century to century tyrhuyn Dehlvi Deccan rulers to continue their conquests extended. And also with Sofia and shaykhs reached there to preach Islam. Although cuduyn mid-century separation of powers in the Deccan to DelhiSeparately, but he was still the language spoken and understood everywhere as a whole .. Hindi, or ... Hindu, was called. They shared language as spoken in India are. as if the current language , Urdu, Hindi, Muslim name, taken. ... However, the Hindu, the language of this area than they were earlier versions of the Dehlvi, pitch-fork, etc. were gone.
Arrival of the Mughals
Language, Hindu,, slowly in different regions of the subcontinent's mnazl artqay was decided on a fresh sub-continent nation stranger) Mughal (Pakistan's leadership was attacked on the currency starting to go around the entire subcontinent.
Arduyy maly ..,,
Shah Jahan, Shah Jahan in Lahore, when a new area of ​​the city and the palace chiefs, councilors and other special places of residence of employees and the name was reserved for Urdu maly,, kept. Though it than the general Delhi ssth, inhabited by civilized and progressive people, where the King's name was placed in the following murs high as Timur Tamerlane and his army where he takes residence, Urdu, was called. Shah Jehan, the new City Market, Urdu Bazaar, Lahore,, say. .. arduyy maly and thus, in the sub-continent has become the most polite language and follow the appropriate ... Urdu, the language name No, but the name of the region where the properties of high-speaking people were living.
Language arduyy maly
Official language in the subcontinent and the Persian court, as was the work of literacy used in Persian, but the same .. language daily negotiation informality Hindu, began to feature in the auction bid was more beautiful and ssth , Based on the language Dehlvi, the type of language. arduyy maly, was named from the name.
Lacerated
Urdu language was not the first language of poetry. Another way of writing poetry was a Persian language poet, although occasionally some fun in this account dka tiger would say. Pejorative language such as Persian and Hindu lion say Amir Khusrau tradition put Amir Khusro dnun the Turkish and Hindi together to invent a new tune called .. he lacerated, had a new tune for the songs they were speaking a new language. The first Urdu In the name of the poem, lacerated, as did many of Amir Khusrau saray said the lion, which lacerated the manifest in the Lion account dka saying sometimes taste was changing, and many rulers in the Deccan by saraywas continuing in the north.

اردو زبان و ادب
تمہید:
برصغیر پاک و ہند میں مسلمان فاتحین کے داخلہ نے یہاں کے باشندوں کی زندگی کے تمام پہلووٕں کو متاثر اور نئی خوبیوں سے آشنا کیا۔ توحید الٰہی کا نعرہ یہاں کے باشندوں کے لئے بالکل ہی نئی آواز تھا، جس نے ہندوستان کے قدیم نظام زندگی میں لرزہ برپا کر دیا۔ دیوی، دیوتاوٕں کی پوجا کے چکر میں پھنسا ہوا معاشرہ ہمیشہ مذہبی آزاد اور مطلق العنان حاکموں کے ظالمانہ اقتدار کا نشانہ بنتا آتا ہے۔ حکمرانوں اور ان کے حمایتی پجاریوں نے عوام کو ذات پات میں تقسیم کر کے انہیں توہم پرست، جاہل اور متعصب بنایا اور خود داد عیش دی ہے۔ اسلام نے یہ طلسم توڑ ڈالا، اور لوگوں کو انسانی پادشاہی، فوق البشری دیوتائی، فضول رسم پرستی، بے جا انسانی امتیاز اور اندھی جہالت کی خوفناک زنجیروں سے نجات دلوائی اور ایسے معاشرے کی بنیاد رکھی جس میں کوئی انسان کسی دوسرے کا محکوم نہیں، کوئی آقا اور بندہ نہیں، کوئی انسانیت سوز اخلاق نہیں، کوئی حمیت جاہلیت نہیں۔ سب انسان اللہ کے بندے اور باہمی مساوات، رحمت، تعاون اور برادری سے زمین پر اللہ کے خلیفہ بن کر اس کی مرضی پوری کرتے ہیں۔
مسلمان کی نشست و برخاست، وضع قطع، لباس، سوچنے سمجھنے کا انداز، پسند و نا پسند کا معیار ہندووٕں سے الگ اور اس کا اثر زبان و ادبیات سے بھی مترشح ہوتا ہے۔ انسان کو اپنی بنائی ہوئی تمام چیزوں میں سب سے زیادہ عزیز اپنی زبان و ادبیات ہے کیونکہ ادب ہی انسان کی ایسی شعوری اور نیم شعوری کوشش ہے جو اس کا مشترک سرمایہ اور میراث ہوتا ہے۔ ادب شخصیت و ذہنیت کے اظہارکا ذریعہ ہی نہیں بلکہ ایک قوم کی تمدنی و مزاجی کیفیات کا آئینہ، اس کی تہذیبی سرگرمیوں کے ارتقائ اور انحطاط کا پیمانہ، اس کو صحیح یا غلط راہوں پر لے کر بڑھنے والی موثر ترین طاقت بھی ہے ادب میں ماضی کی ایسی تمام روایات اور یادداشتیں محفوظ ہوتی ہیں، جن سے قوم طاقت اور تحریک پاتی ہے اور اپنے اعمال کا احتساب کرتی ہے، جو قوموں کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کا باعث ہوتی ہے۔
اردو اور مقامی باشندے
برصغیر پاک و ہند کے لوگ اردو کو اپنی قومی و ملی زبان بتانے میں فخر محسوس کرتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ مختلف علاقوں پنجاب، دکن، سندھ، سرحد اور یوپی کے باشندوں نے اردو کی پرورش و پرداخت میں ایک دوسرے سے بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ہے۔ برصغیر پاک و ہند کے تمام علاقوں نے اردو کا مولد یا کم از کم اس کی ابتدائی نشوونما کا مقام ہونے کا دعویٰ کیا ہے اور اردو کے ساتھ لوگوں پر غیر معمولی کرویدگی کا سبب اس کے سوا کچھ نہیں کہ انہوں نے اردو کو ہمیشہ اپنی زبان سمجھا کیونکہ دنیا کی دیگر سینکڑوں زبانوں میں سے اور کوئی زبان ان کی تہذیب اور مزاج کی نمائندگی اتنی خوبی سے نہیں کرتی۔ غرضیکہ ہندو اور مسلمان دونوں قوموں نے اردو کو پروان چڑھا کر اپنی ثقافت کا تحفظ کیا۔
اردو کا وطن
محمد حسین آزاد نے اپنی مشہور کتاب ٫٫ آب حیات٬٬ میں دعویٰ کیا ہے کہ اردو مقامی زبان برج بھاشا سے نکلی۔ جبکہ بعض مورخین کا دعویٰ ہے کہ اردو کا مولد دکن ہے، پھر علامہ سید سلیمان ندوی کا کہنا ہے کہ ہند میں عرب مسلمانوں کی آمد کے بعد اردو کا بنیادی ڈھانچہ سندھ میں بنا، ڈاکٹر گریرسن ﴿Grierson﴾ دلائل سے ثابت کرتے ہیں کہ اردو اور موجودہ ہندی کی ماں بولی انبالہ کی مشرقی تحصیلوں سے لے کر مراد آباد اور رام پور تک کے دیہاتی علاقوں میں بولی جانے والی کھڑی زبان ہے جبکہ پروفیسر شیرانی یہ ثابت کرتے ہیں اردو نے اس وقت جنم لیا جب مسلمانوں نے لاہور سے بڑھ کر دہلی کو اپنا دار الحکومت بنایا تو وہ ہستی زبان کو پنجاب سے لے کر گئے تھے، اور اس طرح اردو پنجابی سے نکلی ہے۔
اوپر مذکور حضرات کی تحقیقات سے انکار نہیں لیکن ان حضرات کے دعووٕں کی پڑتال کرتے وقت دو باتیں ذہن میں ضرور رہنی چاہئیں۔
اولاً یہ کہ پاکستان اور بھارت کی مقامی زبانیں کا تعلق مرور ایام کے ساتھ ساتھ بدلتی گئی اور اسی کی کوکھ سے بے شمار مستقل زبانوں نے جنم لیا، لیکن ان میں باہمی تعلق پھر بھی برقرار رہا۔ خصوصاً پنجاب اور مغربی دو آب کی زبانیں آج بھی باہم بہت قریب ہیں۔ اسمائ ضمائر مصادر اور حروف عطف وغیرہ ان بولیوں میں یکساں اور الفاظ کے صرفی اور جملوں کے نحوی قواعد بھی بڑی حد تک ایک سے ہیں۔ اور اس سے ثابت ہوتا ہے کہ موجودہ مشرقی پنجاب اور یوپی کی بولیاں ایک ہی زبان کی شاخیں ہیں، مسلمانوں کی آمد سے قبل اس علاقے میں رائج ہو گی۔ سیاسی انتشار اور لامرکزیت کی بدولت یہ زبان کئی بولیوں میں بٹ گئی۔ سیاسی انتشار کے باعث اس زبان کا باقاعدہ تاریخی سرمایہ بھی محفوظ نہ رہ سکا، جس سے اس علاقے کی لسانی تاریخ مرتب ہو سکتی۔
ثانیاً یہ کہ مسلمان فاتحین نے مثالی مسلمان نہ ہوتے ہوئے بھی بعض اسلامی خصوصیات کو مسلسل برقرار رکھا مثلاً باہمی اخوت و مساوات اور اسی کا نتیجہ تھا کہ انہوں نے بڑی حکومت قائم کرنے کی کوششوں کے ساتھ اپنی زبان کی انفرادیت کو بھی برقرار رکھا۔ مسلمان عرب سے عربی لے کر اٹھے تھے تو اسے اپنے تمام مقبوضات میں اس طرح رائج کر دیا کہ آج تک شمالی افریقہ میں وہ رائج ہے۔ وہ مشرقی ممالک میں ایسا نہ کر سکے تو وہاں کی ایک غیر معروف بولی کو ایسی ترقی دی کی فارسی کے نام سے وہ آج بھی متعدد مالک میں بولی اور سمجھی جاتی ہے۔
فارسی بولنے والے افغان، ترک اور منگول جب برصغیر میں فاتحانہ داخل ہوئے تو وہ فارسی زبان کو ساتھ لائے۔ مقامی باشندوں کے ساتھ گھل مل جانے سے انہیں یہاں کی زبان اختیار کرنا پڑی، فارسی سے رشتہ نہ توڑنے کے باعث انہوں نے مقامی بولیوں کو جوں کا توں اختیار نہیں کیا کیونکہ گراں مایہ، شائستہ اور وسیع زبان فارسی پچھلی دو تین صدیوں میں سلاطین ہند کی کوششوں سے مسلمانوں کی ادبی، تہذیبی بلکہ ایک حد تک دینی زبان بن چکی تھی جبکہ ذات پات میں بٹے ہوئے اور سیاسی طور پر منتشر لوگوں کی کوئی زبان اس قابل نہ تھی کہ مسلمانوں کے لئے فارسی کا بدل بن سکتی۔ مسلمانوں کی آمد سے قبل سنسکرت اور پراکرت جو کسی زمانے میں مشترک تمدن اور مرکزی اقتدار کے تحت ہندوستان کے بڑے علاقوں کی قومی اور ادبی زبانیں رہ چکی تھیں مقامی لوگوں میں سیاسی وحدت اور معاشرتی اشتراک یہ بڑی زبانیں بھی قصہ پارینہ بن گئی تھیں۔ ایک معاشرے میں رہنے والے برہمنوں اور شودروں کی زبانوں میں بھی خاصا اختلاف تھا۔ ملک کے طول و عرض میں پندرہ ہزار سے زائد زبانیں رائج تھیں۔
ان منتشر حالات میں مسلمان یہاں وارد ہوئے تو ان کے لئے ممکن نہ تھا کہ وہ اپنی تہذیبی اور ایک حد تک دینی زبان فارسی سے دست بردار ہو جائیں اور ساتھ ہی ہندوستان میں رہ کر فارسی کو پوری طرح اپنائے رکھنا بھی ناممکن تھا۔ چنانچہ انہوں نے وہی کیا جو ان کے بزرگ اس سے قبل کر چکے تھے۔ جس طرح مسلمانوں نے ایران کی بولی ﴿فارسی﴾ کو اسلامی روایات و اقدار کی طاقت سے ایک زبردست تہذیبی سرمایہ بنا دیا اسی طرح انہوں نے برصغیر کی ایک بے حیثیت گمنام بولی کو اختیار کرتے ہوئے اس میں وہ تمام روایات دخل کر دیں جو انہیں عربی و فارسی کے ذریعے ملی تھیں یوں اردو زبان نے جنم لیا جو آج دنیا کی تیسری بڑی زبان بن چکی ہے۔
یوں یہ مسئلہ بھی حل ہو جاتا ہے کہ اردو کا اصل وطن کونسا ہے؟ مسلمان فاتحین ابتدائ موجودہ پاکستان میں بسے اور ان کا سیاسی مرکز لاہور تھا۔ انہوں نے یہاں کی زبان کو اسلامی ضروریات کے مطابق ڈھال لیا۔ صدیوں بعد یہ مرکز لاہور سے ہو کر دہلی آ گیا یوں مسلم تہذیب کا صدر مقام دہلی قرار پایا۔ یہاں مسلمان سپاہیوں، عالموں اور صوفیوں نے اپنے خیالات و جذبات کے اظہار کا ذریعہ جس زبان کو بنایا وہ یہیں کی مقامی بولیوں میں سے تھی، اور یہ بولی پنجاب کی بولیوں سے زیادہ مختلف نہ تھی، فارسی اور اس مقامی زبان کے ملاپ سے جنم لینے والی بولی آگے چل کر اردو کہلائی۔
انقلاب اور زبان
اردو کو مسلمانوں کی یہ مشترک زبان بنتے بنتے کئی نشیب و فراز کا سامنا کرنا پڑا نئے نئے ممالک کی تسخیر دور دراز کے علاقوں پر یلغاروں اور پائے تخت کی دہلی منتقلی سے بیرونی فاتحوں کی نئی بنتی ہوئی زبان مسلسل ترقی کرتی رہی مغلوں کی برصغیر میں آمدار دو زبان کے لئے بڑی حد تک انقلابی تبدیلیوں کا باعث بنی۔ مغلوں کی آمد سے قبل حالات اتنے سازگار ہو چکے تھے کہ ارتقائ پذیر مقامی بولی اردو فارسی کو ہٹا کر سرکاری زبان کا درجہ حاصل کر لے کیونکہ اس وقت تک ﴿1206ئ تا 1526ئ﴾ تین صدی سے نسلاً غیر ملکی سہی، پیدائش و تربیت کے اعتبار سے مقامی باشندوں کی حکمرانی کا دور تھا جو اپنے قدیم آبائی وطن سے کوئی نسبت نہ رکھتے تھے ان کی زبان بھی مقامی ہو گئی تھی جسے سرکاری حیثیت تک پہنچنے کے لئے تین صدی کا زمانہ ملا جو اس کے ارتقائ کا بھی دور کہلاتا ہے تازہ دارد ہند سے اجنبی مغل حکمران اس زبان کی یہ حیثیت تسلیم کرنے پر آمادہ نہ تھے۔ اور اس طرح ایک بار پھر فارسی ہی غالب رہی اور فارسی نے مزید قوت کے ساتھ مقامی زبانوں پر اثر ڈالا۔ مغل حکمرانوں کے درباروں میں صرف شاعر ہی نہ تھے بلکہ ہر طرح کے اہل کمال، ہندوستان کی دولت اور قدر دانی کی کشش سے بے اخیار ہو کر بڑی تعداد میں جمع ہوتے گئے ان نو وارد گان اہل کمال کی زبان اور ادب کا اثر نہ صرف مسلمانوں کی زبان پر پڑا بلکہ غیر مسلم باشندوں کی بولیاں بھی اس سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکیں۔ آگرہ جہاں کی مقامی بولی متھرا ﴿برج﴾ کے علاقے کی شیریں بھاشا تھی، اور علاقہ دہلی کی زبان سے خاصی مختلف تھی نے بھی زبان دہلوی پر اپنا اثر ڈالا جس نے آگے چل کر ٫٫ زبان اردوئے معلی٬٬ کا پر شکوہ لقب پایا شاہ جہاں کے عہد میں شاہ جہاں آباد کے نام سے دار الحکومت قرار پایا تو مغل دربار کی تہذیبی عظمت اپنے پورے عروج پر پہنچ کر اسی دہلی کو رشک جہاں بنانے لگی تو حکمران مسلمانوں کی زبان اپنے نقش اول سے بہت مختلف اور زیادہ خوش نما، وسیع اور شائستہ زبان بن چکی تھی۔ اب اس کے بیشتر قدیم الفاظ و محاورات اور ترکیب یا متروک ہو چکی تھیں یا نئے سانچوں میں ڈھل چکے تھے بعض ویسی الفاظ فارسی و عربی مترادفات کے حق میں دستبردار ہو چکے تھے۔ مختصراً یہ کہ ٫٫ زبان دہلوی٬٬ سے شاہ جہان کے دور کی ٫٫زبان اردوئے معلی٬٬ کو وہی نسبت تھی جو نیم متمدن قبائل سے دور حاضر کے مہذب انسان کو ہے، اردو زبان کی داستان ارتقائ اتنی سادہ نہیں جتنی سمجھی جاتی ہے۔ زبان کے آغاز سے لے کر اسے ادبی حیثیت اختیار کرنے تک اس کی تاریخ میں بھانت بھانت کی بولیوں اور زبانوں نے سیاسی و معاشرتی تلاطموں کا سامنا کرتے ہوئے کہیں جا کر موجودہ مقام حاصل کیا۔

بہرحال تمام انقلابات کے باوصف یہ زبان مسلمانوں کی تہذیبی و معاشرتی رحجانات کی آئینہ دار رہی اور اس نے غیر مسلم کہلاتی اثرات کو قبول نہ کیا۔ اسی باعث اردو کو آج بھی ہندو مسلم اتحاد کی یادگار مانا جاتا رہا ہے۔
اردو کے نام
برصغیر میں پروان چڑھنے والی زبان کا موجودہ نام ٫٫ اردو٬٬ پچھلی صدی میں تجویز ہوا جو جلد ہی پورے برصغیر میں رائج ہو گیا۔ ترکی زبان میں لشکر کو اردو کہتے ہیں اور لشکر ہی کی طرح اس میں بھی مختلف زبانوں کے الفاظ جمع ہو گئے، یعنی لشکر میں مختلف بولیاں بولنے والوں کے جمع ہو جانے سے جو زبان مشترکہ ذریعہ ابلاغ بنی وہ اردو کہلائی۔
برصغیر میں مسلمانوں کی آمد کے وقت برصغیر بے شمار چھوٹی چھوٹی اور خود مختار ریاستوں میں تقسیم تھا۔ جن میں میل جول نہ ہونے کے باعث ہر علاقے کی تہذیب اور معاشرت کی طرح زبانیں بھی الگ ہو گئی تھیں۔ مگر چونکہ برصغیر کے لوگ ایک ہی نسل ﴿آریا﴾ سے تعلق رکھتے تھے ان کی ایک ہی زبان تھی اس لئے ان کی تمام زبانیں الگ الگ ہونے کے باوجود کسی نہ کسی حد تک آپس میں ملتی جلتی بھی تھیں۔ جب مسلمانوں نے برصغیر فتح کر کے یہیں بس جانے کا ارادہ کر لیا تو انہوں نے یہاں کی زبانوں کو اختیار کرنے کے ساتھ ہی اپنی تہذیب و معاشرت اور ملی زبانوں ﴿عربی و فارسی﴾ کے اثرات بھی ان علاقوں پر ڈالنا شروع کر دیئے۔ اس لئے ایک مشترک زبان بھی قدرتاً ظہور میں آنے لگی۔
ہر علاقے کے مسلمان باہمی گفتگو کیلئے مقامی بولی استعمال کرنے لگے اور اس میں فارسی و عربی الفاظ خود بخود استعمال ہونے لگے، کیونکہ اسلامی تہذیب تمدن کی ضروریات فارسی و عربی ہی سے پوری ہو سکتی تھیں اور اس طرح مقامی بولیاں اسلامی اثرات قبول کرنے لگیں۔ اور اردو جیسی عظیم الشان زبان ارتقا کے مراحل طے کرنے لگی۔
امیر خسرو نے مقامی زبانوں کو علاقوں کے بجائے شہروں سے منسوب کیا۔ امیر خسرو نے ان کو لاہوری اور ملتانی زبان کے ناموں سے یاد کیا ہے۔ یعنی دہلی، لاہور اور ملتان وغیرہ کی زبانیں، یہ زبانیں ایک دوسرے سے اس قدر مختلف تھیں کہ ان کو الگ الگ نام دیئے گئے۔ مغل بادشاہ اکبر کے مشہور وزیر ابوالفضل بھی زبان دہلوی و لاہوری وغیرہ کو الگ الگ زبانیں قرار دیتے ہیں۔
اولیائے کرام اور اردو زبان
اردو زبانوں کے پھیلاوٕ میں مسلم حکمرانوں سے کہیں زیادہ جن لوگوں نے کام کیا وہ اولیائے کرام تھے جو عوام کو روز مرہ کی مقامی بولی میں دین و اخلاق کی تعلیم دیتے تھے اشاعت اسلام میں معروف ہر بزرگ نے مقامی لوگوں کو اپنی آسان اور دلنشیں گفتگو سے متاثر کیا، ان حضرات کی ذاتی سادہ زندگی، پر خلوص نصیحت اور اعلیٰ کردار کی بدولت عوام ان کے گرویدہ ہو جاتے تھے اور ہمیشہ انہی کی طرف رجوع کرتے تھے۔ اس طرح ان بزرگوں نے لوگوں کے اخلاق سدھارنے کے ساتھ ساتھ اردو زبان سمجھنے او ربولنے کا ذوق بھی پیدا کر دیا۔ اردو کی تاریخ میں قدیم ترین شعری و نثری نمونے انہی بزرگوں کے اقوال کی صورت میں ملتے ہیں، ان کے بولے گئے جملوں میں یکسانی اور ہم آہنگی موجود ہے۔ بابائے اردو مولوی عبدالحق نے اپنی مختصر کتاب ٫٫ اردو کی ابتدائی نشوونما میں صوفیائے کرام کا حصہ٬٬ میں ان بزرگوں کے اقوال درج کر دیئے ہیں، جنہیں پڑھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ کس طرح ان حضرات نے برصغیر کے طول و عرض میں تبلیغ دین اور اصلاح کردار کے ساتھ ساتھ ایک مشترک زبان کو پروان چڑھانے میں اپنا کردار ادا کیا۔
تیرہویں صدی سے سولہویں صدی عیسوی تک دہلوی حکمرانوں نے اپنی فتوحات کا سلسلہ دکن تک پھیلا دیا۔ اور ان کے ساتھ ساتھ صوفیہ و مشائخ بھی تبلیغ اسلام کے لیے وہاں جا پہنچے۔اگرچہ چودھویں صدی کے وسط ہی میں دکن نے دہلی سے علیحدگی اختیار کر کے ایک الگ مستقل، خود مختار حکومت قائم کر لی تھی لیکن جو زبان شمال سے دکن تک پہنچ گئی تھی وہ مسلسل ترقی کرتی رہی تاہم اس نئی زبان میں یکسانی و ہمواری پیدا نہ ہو سکی۔ ہر علاقے کے مقامی اثرات میں زبان پر ہر جگہ الگ الگ تھے لیکن اس نے باوجود یہ زبان ہر جگہ سمجھی اور بولی جاتی تھی اسے مجموعی طور پر ٫٫ہندی٬٬ یا ٫٫ ہندوی٬٬ کہاجانے لگا۔ یعنی وہ زبان جو ہندوستان میں مشترک طور پر بولی جاتی ہو۔ گویا موجودہ زبان ٫٫ اردو٬٬ کا نام مسلمانوں نے ٫٫ ہندی٬٬ رکھا۔ البتہ اسی ٫٫ ہندوی٬٬ زبان کی جو شکلیں رائج ہوئیں انہیں اسی علاقے کی نسبت سے دہلوی، دکنی، گجری وغیرہ کہا جاتا تھا۔
مغلوں کی آمد
٫٫ زبان ہندوی٬٬ برصغیر کے مختلف علاقوں میں سست رفتاری سے ارتقائ کی منازل طے کر رہی تھی کہ برصغیر پر ایک تازہ دم اجنبی قوم ﴿مغل﴾ بابر کی قیادت میں حملہ آور ہوا تو اس کا سکہ تقریباً پورے برصغیر پر چلنے لگا۔ مغلیہ سلطنت پہلی مسلم حکومتوں سے زیادہ پائیدار ثابت ہوئی تو ٫٫ زبان ہندوی٬٬ کی مختلف صورتیں آپس میں اور زیادہ قریب آنے لگیں۔ مغلوں کے انتہائی عروج کے زمانہ میں ہندوی زبان تقریباً پورے برصغیر میں اپنے قدم جما چکی تھی مغلوں کا پائے تخت مغل ثقافت و تمدن کا مثالی نمونہ بن گیا اور تمام علاقوں کے لوگ دہلی ہی سے رجوع کرنے لگے اور یوں زبان کے معاملے میں دہلی کو سند کی حیثیت حاصل ہو گئی اور مقامی لوگ دہلوی زبان کی پیروی پر فخر کرنے لگے۔
٫٫ اردوئے معلی٬٬
شاہ جہاں نے ٫٫ شاہ جہان آباد٬٬ کیا تو اس نئے شہر کے ایک علاقہ کو اپنے محل اور سرداروں، درباریوں اور دوسرے خصوصی ملازموں کی رہائش گاہوں کے لئے مخصوص کر کے اس کا نام ٫٫ اردو معلی٬٬ رکھا۔ گویا یہ شہر عام دہلی کے مقابلے میں زیادہ شستہ، مہذب اور ترقی یافتہ لوگوں کی بستی تھی، شاہ جہاں نے اس کا یہ نام اپنے مورث اعلیٰ امیر تیمور کی پیروی میں رکھا تھا کیونکہ تیمور اپنے لشکر سمیت جہاں اقامت اختیار کرتا اسے ٫٫ اردو٬٬ کہا جاتا تھا۔ شاہ جہاں کے آباد کردہ نئے شہر کا بازار ٫٫اردو بازار٬٬ کہلوایا۔ اور یوں٫٫ اردوئے معلی٬٬ برصغیر میں سب سے زیادہ شائستہ اور لائق تقلید زبان بن گئی یعنی ٫٫ اردو٬٬ زبان کا نام نہیں، بلکہ اس علاقے کا نام تھا جہاں اعلیٰ زبان بولنے والے خواص و عوام قیام پذیر تھے۔
زبان اردوئے معلی
اگرچہ برصغیر میں درباری اور دفتری زبان فارسی ہی تھی کیونکہ پڑھائی لکھائی کا سارا کام مسلمان فارسی ہی میں کرتے تھے، لیکن روز مرہ بے تکلف گفتگو اسی ٫٫ زبان ہندوی٬٬ میں ہونے لگی خواص کی بولی عوام بولی سے زیادہ خوبصورت اور شستہ تھی، جس کی بنا پر٫٫ زبان دہلوی٬٬ کی اس قسم کو ٫٫ زبان اردوئے معلی٬٬ کے نام سے الگ موسوم کیا گیا۔
ریختہ
ابتداً اردو زبان کو شعر کی زبان نہیں بنایا گیا۔ دوسری تحریروں کی طرح شاعری کی زبان بھی فارسی ہی تھی البتہ کبھی کبھار کوئی کوئی شاعر تفریحاً اکا دکا شعر اس زبان میں بھی کہہ لیتا تھا۔ جیسے فارسی اور ہندوی آمیز زبان میں شعر کہنے کی روایت امیر خسرو نے ڈالی، امیر خسرو نے ترکی اور ہندی دھنوں کو ملا کر ایک نئی دھن ایجاد کی جس کا نام انہوں نے ٫٫ ریختہ٬٬ رکھا تھا اس نئی دھن کے لئے اشعار انہوں نے نئی زبان میں کہے تھے۔ یوں ابتدائی اردو میں ہونے والی شاعری کا نام ٫٫ ریختہ٬٬ قرار پایا امیر خسرو کے بعد متعدد شعرائ نے ریختہ میں اکا دکا شعر کہے جس کا مقصد صریحاً شعر کہتے کہتے کبھی کبھار منہ کا ذائقہ بدلنا تھا، جبکہ دکن میں حکمرانوں سمیت بہت سے شعرائ نے اس زبان میں شعر گوئی شروع کر دی تھی اگرچہ وہاں اس کا نام ٫٫ دکنی٬٬ تھا مگر چونکہ اس علاقہ کی مقامی زبانوں سے اس نئی شمالی زبان کا کوئی رشتہ نہیں تھا اس لئے اس میں وہ قدرتی ترقی اور نشوونما نہ ہو سکی جو شمال میں برابر جاری تھی۔
If you born poor, its not your fault....But if you die poor, its your fault...."Bill Gates"