Library Sindh Study FG Study quiz Punjab Study
PakStudy :Yours Study Matters

PU teacher gets contempt notice for arrested Teacher

Offline sb

  • **
  • 23659
  • +5/-0
  • Gender: Female
PU teacher gets contempt notice for arrested Teacher
« on: April 17, 2019, 09:53:00 AM »
PU teacher gets contempt notice for arrested Teacher
LAHORE: The Lahore High Court (LHC) on Tuesday issued a contempt of court notice to a Punjab University (PU) teacher and got her arrested after she started crying loudly during the hearing of a case disrupting the court proceedings.

Ms Khujista Rehan, an assistant professor, had been in litigation with her fellow teachers at the university accusing them of running a vilification campaign against her in a Whatsapp group.

On her application, the cyber-crime cell of the Federal Investigation Agency (FIA) also initiated action against the respondent teachers, including one Dr Nayab Batool. Ms Batool secured a stay order by the high court against the FIA proceedings. Advocate Saqi, the counsel of Ms Batool, was advancing his arguments before the five-judge larger bench when Ms Rehan entered the courtroom and took over the rostrum. She complained that the court did not hear before granting stay to Batool. The bench advised Ms Rehan against interrupting the court’s proceedings and assured her of giving ample opportunity of hearing. However, the lady kept crying his ‘grievance’ loudly and also accused one of the members of the bench of using filthy language against her, ignoring repeated warnings from the judges to maintain calm. The bench headed by Justice Syed Mazahar Ali Akbar Naqvi summoned woman police officials to arrest Ms Rehan when she ignored all the warnings and continued to violating the court decorum. The women personnel took the lady teacher out of the courtroom and initially shifted her to high court security room. Later, she was released on the order of the bench.The news.
If you born poor, its not your fault....But if you die poor, its your fault...."Bill Gates"

Offline AKBAR

  • *****
  • 3914
  • +1/-1
  • Gender: Male
    • pak study
عدالت میں ہنگامہ آرائی کرنے والی جامعہ پنجاب کی خاتون ٹیچرگرفتار
لاہور ہائی کورٹ کے لارجر بینچ میں ہنگامہ آرائی کرنے والی پنجاب یونیورسٹی کی ٹیچر خجستہ رحمٰن کو عدالتی پولیس نے حراست میں لے لیا ۔
جسٹس سید مظاہر علی اکبر نقوی کی سربراہی میں لارجربینچ ایف آئی اے کی جانب سے پنجاب یونیورسٹی کی پروفیسر ڈاکٹر نایاب کے خلاف کارروائی کرنے سے متعلق کیس کی سماعت کررہا تھا۔
دوران سماعت لارجر بینچ کی طرف سے متعدد مرتبہ منع کرنے کے باوجود خاتون ٹیچر خجستہ رحمٰن کمرہ عدالت میں چیختی رہیں۔
انہوں نے کہا کہ ’میں نے ایف آئی اے میں ڈاکٹر نایاب کے خلاف درخواست دی ہوئی ہے لیکن عدالت نے مجهے سنے بغیر ہی حکم امتناع جاری کر دیا‘۔
جس پر لارجر بینچ نے ریمارکس دیئے کہ ’میڈم آپ حوصلہ رکهیں، عدالت آپ کو موقع دے گی‘۔
زیرحراست خاتون نے الزام لگایا کہ ’مجهے فل بینچ پر یقین ہی نہیں، ایک جج نے میرے خلاف اوپن کورٹ میں نازیبا ریمارکس دیئے‘۔
جس پر لارجر بینچ نے سخت اظہار برہمی کیا اور کہا کہ ’آپ اپنی حد سے تجاوز کر کے توہین عدالت کر رہی ہیں‘۔
کمرہ عدالت میں خجستہ رحمٰن نے لارجر بینچ کے انتباہی ریمارکس کو بھی نظر انداز کیا اور مسلسل چیخ وپکار کا سلسلہ جاری رکھا جس پر لارجر بینچ نے کمرہ عدالت میں ہنگامہ آرائی کرنے اور ججز پر الزام لگانے پر خاتون ٹیچر کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کر دیا۔
لارجر بنچ کے ججز کے بارے میں نازیبا الفاظ پر ہائیکورٹ سکیورٹی نے خاتون کو حراست میں بهی لے لیا۔
بعدازاں خجستہ رحمٰن نے کہا کہ ’میں جسٹس مظاہر علی اکبر نقوی کے خلاف صدر پاکستان اور سپریم جوڈیشل کونسل میں مس کنڈکٹ کی درخواست دوں گی‘۔
خجستہ رحمٰن نامی پنجاب یونیورسٹی کی ٹیچر نے ڈاکٹر نایاب سمیت 14 افراد کے خلاف کارروائی کے لیے ایف آئی اے کو درخواست دی تھی.
لاہور ہائیکورٹ کے سنگل بنچ نے ایف آئی اے کو ڈاکٹر نایاب کے خلاف تادیبی کارروائی سے روک دیا تھا۔
بعدازاں ڈاکٹر نایاب نے ہائی کورٹ میں اپنی درخواست میں خجستہ رحمٰن کو بھی فریق بنایا تھا۔
حوالہ: یہ خبر ڈان نیوز ڈاٹ ٹی وی پر مورخہ 16 اپریل 2019 کو شائع ہوئی